کفر کے پروردہ ہو کر رہ گئے ششدر تمام

کفر کے پروردہ ہو کر رہ گئے ششدر تمام
آپ کے دستِ کرم میں بول اٹھے پتھر تمام

آپؐ کے اخلاق نے ایسا دکھایا معجزہ
کند ہو کر رہ گئے تھے کفر کے خنجر تمام

آپؐ کے صدقے میں ہے یہ کائنات رنگ و بو
آپؐ پر قرباں مرے ماں باپ گھر کا گھر تمام

یہ جو پیاسوں کی سرِ محشر نظر آتی ہے بھیڑ
آپؐ ہی کے تشنہ لب ہیں ساقیِٔ کوثر تمام

ہر عمل میں آپؐ کے پنہاں تھیں سو سو حکمتیں
معترف ہیں آج بھی دنیا کے دیدہ ور تمام

روضۂ سرکارؐ ہے پیشِ نظر تقدیر سے
آج تو گوہر لٹا دے اپنے چشمِ تر تمام

آپؐ ہی کے حسن کا صدقہ ہے حسنِ کائنات
آپؐ کے ہی دم سے ہیں سرکارؐ یہ منظر تمام

متحرم تو اور بھی انسان اس دنیا میں ہیں
عظمتوں کی سب حدیں ہیں سرورِؐ دیں پر تمام

کام آئے گا نہ کوئی بھی سوائے مصطفیؐ
جمع جب مخلوق ہوگی برسرِ محشر تمام

واقعی انسان کو انساں بنایا آپؐ نے
آدمیت کے نکھارے آپؐ نے جوہر تمام

مل گیا مجھ کو مدینے سے پیامِ جانفزا
ہو گئے مایوس جس دم میرے چارہ گر تمام

معجزے اعجازؔ وہ سرکارؐ نے دکھلائے ہیں
آج تک حیران ہیں دنیا کے دیدہ ور تمام