تذکرہ صبح و شام کس کا ہے

تذکرہ صبح و شام کس کا ہے
یہ اذانوں میں نام کس کا ہے

جس کو سن کر درود پڑھتے ہیں
یہ بتاؤ وہ نام کس کا ہے

پوچھیے یہ سوال قرآں سے
کس پہ اُترا کلام کس کا ہے

جب چلیں وہ تو وقت رک جائے
اس قدر احترام کس کا ہے

کیوں نہ شاہوں سے ہو بلالؓ سوا
کس کا بندہ! غلام کس کا ہے

فہم سے دور ہیں حدیں جس کی
اتنا اونچا مقام کس کا ہے

بخش دینا تو کام ہے رب کا
بخشوانا یہ کام کس کا ہے

خالقِ بزمِ کائنات ہے کون
اور اس میں نظام کس کا ہے

کیا مقدر ہے میرے دل کا بھی
کس کا گھر ہے قیام کس کا ہے

گردشوں کو خبر نہیں شاید
میرے ہاتھوں میں جام کس کا ہے

لازم اعجازؔ ادب ہے طیبہ میں
جانتے ہو مقام کس کا ہے