سب چراغ ایسے بفیضِ مصطفیؐ روشن ہوئے

سب چراغ ایسے بفیضِ مصطفیؐ روشن ہوئے
جب بھی ان کے پاس سے گزری ہوا روشن ہوئے

جب درود پاک پڑھ کر میں نے مانگی ہے دعا
لب ہوئے روشن مرے دستِ دعا روشن ہوئے

گر یقیں میرا نہیں تو آسماں سے پوچھ لو
کہکشاں بن کر نبیؐ کے نقشِ پا روشن ہوئے

کفر کی تاریکیاں بھی نور ساماں ہو گئیں
جب چراغِ سیرتِ خیرالوریٰؐ روشن ہوئے

وہ ابوبکرؓ و عمرؓ ہوں یا ہوں عثمانؓ و علیؓ
کیسے کیسے پیکرِ صدق و صفا روشن ہوئے

کائناتِ رنگ و بو میں آگیا اک انقلاب
حرفِ اقرا جب سرِ غارِ حرا روشن ہوئے

پڑھ رہا تھا عالمِ امکاں کا ہر ذرّہ درود
جب خد و خالِ حبیبؐ کبریا روشن ہوئے

فطرتِ انساں بدل دی اسوۂ سرکارؐ نے
آدمی کے جوہرِ صبر و رضا روشن ہوئے

عظمتِ انساں کا باعث بن گئی ذاتِ رسولؐ
بجھ گئے تھے جو چراغِ ارتقا روشن ہوئے

آپؐ کے آنے سے انساں کو ملی راہِ نجات
چھن گئی تھی جن ستاروں کی ضیا، روشن ہوئے

یہ بھی ہے اعجازؔ اعجازِ ثنائے مصطفیؐ
نعت پڑھنے سے لبِ مدحت سرا روشن ہوئے