جسم کیا روح کو لذت کش آزار کیا

جسم کیا روح کو لذت کشِ آزار کیا
کیا مسیحا تھا کہ جس نے مجھے بیمار کیا

جھوٹ کے شہر میں سچائی کا اظہار کیا
پارسائی نے مجھے میری گناہ گار کیا

تیرگی گھر سے اچانک جو ہوئی ہے رخصت
کس نے روشن یہ چراغِ لب و رخسار کیا

ساری بستی ہی تھی سیلاب کی زد میں کل شب
میرے گھر کو ہی مگر بے در و دیوار کیا

مجھ سے سورج بھی ہے ناراض، سحر بھی ناخوش
چاک کیوں میں نے گریبانِ شبِ تار کیا

خامشی بھی تو کسی کام نہ آئی میرے
چشمِ تر نے مری کارِ لبِ اظہار کیا

بے سکوں کر دیا زنداں کے نگہبانوں کو
کیا غضب تو نے یہ زنجیر کی جھنکار کیا

کسی دستک سے نہ ٹوٹا مرے خوابوں کا فسوں
میرے اندر کی صدا نے مجھے بیدار کیا

شرم آتی ہے یہ کہتے ہوئے اعجازؔ مجھے
مجھ پہ احباب نے دشمن کی طرح وار کیا