زمیں منزل ہے میری اور نہ میری آسماں منزل

زمیں منزل ہے میری اور نہ میری آسماں منزل
مری منزل تو ہے محبوبؐ رب کا آستاں منزل

مری نظروں میں رہتی ہے بہار گنبدِ خضرا
نہ صحرا ہے میری منزل نہ میری گلستان منزل

یہاں تو ہر قدم پر شادمانی دل کو ملتی ہے
مسافر پر نہیں ہوتی مدینے کی گراں منزل

خدا شاہد یقیں تو ہے تری باتوں پہ بھی مجھ کو
مجھے معلوم ہے واعظ کہ ہے میری کہاں منزل

میری منزل تو نقشِ پائے سرکار دو عالمؐ ہیں
مہ و خورشید ہیں منزل نہ میری کہکشاں منزل

چراغِ راہ منزل کیوں نہ ہو وہ نقشِ قدم میرا
میں رکھتا ہوں خدا و مصطفیؐ کے درمیاں منزل

بفیضِ عشقِ احمدؐ یہ مجھے اعجازؔ حاصل ہے
جہاں آواز دوں اعجازؔ آجائے وہاں منزل