درودوں کی صدا سے گونجتی ہے انجمن کس کی

درودوں کی صدا سے گونجتی ہے انجمن کس کی
ثنا کرتے ہیں محفل میں یہ ارباب سخن کس کی

بتاؤ کون اور کس پر ہوا نازل کلام رب
سدا توصیف کرتا ہے خدائے ذوالمنن کس کی

دیار جہل میں کس نے جلائیں علم کی شمعیں
بتائے تو کوئی میراث ہے یہ علم و فن کس کی

پسینہ کس کا ہے جس سے مشام جاں معطر ہے
لٹاتے ہیں یہ خوشبوئیں چمن میں گلبدن کس کی

بشکل کہکشاں کس کے ہیں یہ نقشِ قدم روشن
نشانی ہے بتاؤ یہ سرِ چرخِ کہن کس کی

دیارِ زندگی میں رنگ ہیں کس کے تبسم کے
خدا کا قہر بن جاتی ہے ماتھے کی شکن کس کی

بتاؤ کس کی جانب ہے سفر سب اہلِ ایماں کا
تجسّس میں ہمیں رکھتی ہے بوئے پیرہن کس کی

یہ کس کے دم سے قائم ہے ثبات گلشنِ ایماں
کہو مرہونِ منّت ہے یہ تہذیب چمن کس کی

وَرَفَعَنَا لکَ ذِکرَکَ ہے کس کی شان میں آیا
بھلا اعجازؔ پہنچے گی وہاں فکرِ سخن کس کی