درد دل کی دوا کر رہے ہیں

درد دل کی دوا کر رہے ہیں
مصطفیؐ مصطفیؐ کر رہے ہیں

زخم کھا کر دعا کر رہے ہیں
دشمنوں کا بھلا کر رہے ہیں

آج بھی رہنمائی ہماری
آپؐ کے نقشِ پا کر رہے ہیں

اور تو کچھ نہیں یاد ہم کو
ذکرِ صلِّ علیٰ کر رہے ہیں

ربط ہے جس کا کوئے نبیؐ سے
ہم وہ روشن دیا کر رہے ہیں

بادشاہوں کو فرصت کہاں ہے
کام ان کے گدا کر رہے ہیں

جیتے جی مل گئی ان کو جنت
جو مدینے میں آ کر رہے ہیں

چھوڑ کر دامنِ مصطفیؐ کو
ہم مسلمان کیا کر رہے ہیں

نعتِ سرکارؐ اعجازؔ لکھ کر
حقِ مدحت ادا کر رہے ہیں