اِک شعر بھی ہو جائے جو شایانِ محمدؐ

اِک شعر بھی ہو جائے جو شایانِ محمدؐ
دنیا مجھے کہنے لگے حسّانِ محمدؐ

موقوف نہیں ہم پہ ہی فیضانِ محمدؐ
کونین کی ہر شے پہ ہے احسانِ محمدؐ

بوجہل صفت آج بھی انسان بہت ہیں
ہر شخص کو ہوتا نہیں عرفانِ محمدؐ

اک ہم ہی نہیں سائے میں ہیں کون و مکاں بھی
اللہ رے یہ وسعتِ دامانِ محمدؐ

توحید کی خوشبو سے معطر ہیں فضائیں
دیکھے تو کوئی رنگِ گلستانِ محمدؐ

قندیل سرِ عرش ہے عارِض کی تجلی
خورشید و قمر حلقہ بگوشانِ محمدؐ

باطن میں وہی لوگ ہیں مختارِ زمانہ
جو لوگ بظاہر ہیں غلامانِ محمدؐ

دنیا کے ہر اک اِزم نے کاوِش تو بہت کی
چھوٹا نہ مرے ہاتھ سے دامانِ محمدؐ

اللہ سے ملتی ہے اُسے داد سخن کی
اعجازؔ جو شاعر ہے ثنا خوانِ محمدؐ