لاکھ میں مفلس ہوں استغنیٰ مری فطرت میں ہے