جسم و جاں بیمار ہیں یارو! دوا کرتے رہو

جسم و جاں بیمار ہیں یارو! دوا کرتے رہو
جس قدر ممکن ہو ذکرِ مصطفیؐ کرتے رہو

پیرویٔ اُسوۂ خیرُ الوریٰؐ کرتے رہو
دوستو! دشمن کے حق میں بھی دُعا کرتے رہو

آنکھ میں اشکِ ندامت اور ہو لب پر درود
کوچۂ سرکارؐ کا طے راستا کرتے رہو

سرورِ کونینؐ سے رکھو شفاعت کی اُمید
اپنی حالت کا بھی لیکن تجزیہ کرتے رہو

ہر گھڑی روشن رہے قندیلِ یادِ مصطفیؐ
مستقل آئینۂ دل پر جِلا کرتے رہو

اپنے ہونٹوں پر سجالو مدحتِ خیر البشرؐ
دل کو عکسِ مصطفیؐ سے آئینہ کرتے رہو

سبز گنبد کی طلب بڑھتی رہے بڑھتی رہے
زندگی کے دشت کو خلد آشنا کرتے رہو

خاکِ کوئے مصطفیؐ سے کچھ اُجالا مانگ کر
ہر قدم پر اپنے روشن نقشِ پا کرتے رہو

ہاتھ سے چھوٹے نہ دامانِ محمد مصطفیؐ
بس یہی اعجازؔ رب سے التجا کرتے رہو