کس کو ہے مرتبہ یہ میسّر، آپؐ ہیں اور کوئی نہیں ہے

کس کو ہے مرتبہ یہ میسّر، آپؐ ہیں اور کوئی نہیں ہے
کون ہے رحمتوں کا سمندر، آپؐ ہیں اور کوئی نہیں ہے

آپؐ مہمانِ عرشِ بریں ہیں، آپؐ شرحِ کتاب مبیں ہیں
عظمتیں ختم ساری ہیں جن پر، آپؐ ہیں اور کوئی نہیں ہے

آرزوئیں، اُمیدیں، تمنا آپؐ ہی سے ہیں وابستہ آقا
آپؐ جیسا کوئی بندہ پرور، آپؐ ہیں اور کوئی نہیں ہے

یہ سلاموں، دُرودوں کے تحفے کس کی خاطر خدا نے ہیں بھیجے
کس سے ہے شانِ محراب و منبر، آپؐ ہیں اور کوئی نہیں ہے

یہ فرشتے یہ جن اور انساں، اور خود خالقِ بزمِ امکاں
کون ہے کس کے ہیں سب ثنا گر، آپؐ ہیں اور کوئی نہیں ہے

ہم گناہگارِ شاہِ اممؐ ہیں، لیکن امیدوارِ کرم ہیں
بخششوں کے لیے روز ِمحشر، آپؐ ہیں اور کوئی نہیں ہے

کس کو جاکر غمِ دل سنائیں، آپ پر کیوں نہ قربان جائیں
صرف اور صرف محبوبِ داور، آپؐ ہیں اور کوئی نہیں ہے

روشنی تیرگی میں لٹائے، خضرؑ کو بھی جو رستا دکھائے
دونوں عالم میں ایک ایسے رہبر، آپؐ ہیں اور کوئی نہیں ہے

منفرد سب سے ہے انداز کس کا، یہ اعجازؔہے اعجاز کس کا
جن کی مٹھی میں بول اٹھیں پتھر، آپؐ ہیں اور کوئی نہیں ہے