دنیا سے جدا یا رب اندازِ بیاں دے دے

دنیا سے جدا یا رب اندازِ بیاں دے دے
سرکارؐ کی مدحت کو قرآں کی زباں دے دے

تھوڑی سی جگہ مجھ کو مل جائے مدینے میں
کب میں نے کہا یا رب تو کون و مکاں دے دے

درکار مجھے بھی ہو صدقہ شبِ اسریٰ کا
سرکارؐ کے قدموں کا مجھ کو بھی نشاں دے دے

کچھ دیر میں روضے کے سائے میں ٹھہر جاؤں
بس اتنی مجھے مہلت اے عمرِ رواں دے دے

سرکارؐ کی نسبت ہی ایماں کا اجالا ہے
محفل کے نہیں لائق جو شمع دھواں دے دے

جز سرورِؐ دیں ایسا ہے اور کوئی فاتح
جو جان کے دشمن کو بے مانگے اماں دے دے

ایمان و محبت کا بس اتنا تقاضا ہے
دل مانگیں تو دل دے دے جاں مانگیں تو جاں دے دے

ہے بابری مسجد کا احوال کچھ ایسا ہی
فاروق کوئی آئے کعبے میں اذاں دے دے

اِرشاد ہے قرآں کا اعجازؔ وہ زندہ ہے
اللہ کے رستے میں جو شخص کہ جاں دے دے