جب سفر جانبِ اِرتقا کیجیے

جب سفر جانبِ اِرتقا کیجیے
ذکرِ معراجِ خیرُالوریٰؐ کیجیے

احتسابِ عمل برملا کیجیے
اپنے گھر سے مگر ابتدا کیجیے

آج انسان رحمت کے سائے میں ہے
شکریہ مصطفیٰؐ کا ادا کیجیے

مَل کے چہرے پہ خاکِ درِ مصطفیٰؐ
بے جِلا آئینے پر جِلا کیجیے

دوستو! ہے یہ تعلیمِ خیرالبشرؐ
اپنے دشمن کے حق میں دُعا کیجیے

سیرتِ مصطفیٰؐ جس میں آئے نظر
اپنے کردار کو آئینہ کیجیے

جس کی لو ہو چراغِ حرم سے لگی
ایک ایسا بھی روشن دیا کیجیے

مصطفیٰؐ سے محبت کا دعویٰ تو ہے
اپنے کردار کا تجزیہ کیجیے

جب حدیث اور قرآن موجود ہیں
کس کو اعجازؔ پھر رہنما کیجیے